چار سال کا بچہ بھی جانتا ہے خوشی کا راز


چار سال کا بچہ بھی جانتا ہے خوشی کا رازچار سال کا بچہ بھی جانتا ہے خوشی کا راز

کچھ لوگ دوسروں کی مدد کے لیے آمادہ ہوتے ہیں۔ اگرچہ یہ رویہ بالغوں میں دیکھا جاتا ہے، لیکن محققین نے اس رویے کو بچوں میں دیکھنے کے مقصد سے تحقیق کی۔ بالغوں کی طرح ہی ان کے یہاں بھی نتائج ملے۔ کہا جا سکتا ہے کہ دوسروں کو راحت پہنچا کر بچے بھی خوشی محسوس کرتے ہیں۔ امیر خاندانوں کے بچوں کے مقابلے میںاوسط طبقے کے بچے زیادہ احسان کرتے ہیں۔

کیلی فورنیا،ڈیوس یونیورسٹی کے جونس ملر، بڑے محقق اور ماہر نفسیات نے کہا کہ ’’ اس تحقیق میں ہمیں بچوں کے بے لوث احسان کا احساس، خاندان کی خوشحالی اور ان کی جسمانی صحت کے تعلق سے آپس میں وابستہ ہونے کے سلسلے کو لے کر نئی تفہیم ملی۔

گزشتہ جائزوں میں بے لوث احساس (ذاتی قیمت پر انسان دوستی) اور بہتر جسمانی اور ذہنی صحت کے درمیان تعلقات دیکھے تھے، جسے ہم بالغوں میں، خوشی کے طور پر بیان کر سکتے ہیں۔ اس تحقیق کا مقصد تھا یہ دیکھنا کہ بے لوث جذبے سے حوصلہ افزا کام کے تعلق سےبچے کس طرح رد عمل کرتے ہیں۔ یہ بھی دیکھا گیا کہ خاندان کی خوشحالی سے بے اعتنائی کس طرح رہے گی۔

تحقیق کے لیے، اوسطا ً ~4 سال کی عمر کے، 74 پری اسکول کےشریک بچوں نے ذاتی طور پر محقق کے ساتھ ایک کھیل کھیلا۔ انہیں بتایا گیا کہ کھیل کے دوران وہ ٹوکن کما سکتے ہیں جن کے نتیجے میں ان کے بعد میں ایوارڈ دیا جائے گا۔ کھیل کے بعد بچوں سے پوچھا گیا کہ کیا وہ سب کے سب ٹوکن کسی ایسے بچے کے لئے عطیہ کرنا چاہتے ہیں جو بیماری کی وجہ سے اس کھیل میں شامل نہیں ہو سکا؟

محققین نے ہر بچے کےجسمانی ڈیٹا جیسے دل کی دھڑکن کی شرح اور لہجے کی پیمائش کے لئے سینسر لگا دیے تھے لہجے کو ناپنے کا طریقہ نبض کے افعال کی پیمائش کے طریقہ کار جیسا ہے یہ نبض دماغ کے ساتھ دوسرے اعضاء کو اکٹھا جتنی زیادہ ہوتی ہے، اس شخص کی طرف سے اتنا زیادہ محفوظ اور پرسکون محسوس کیا جانے طرف اشارہ ہوتا ہے، اونچا لہجہ ہونا بچوں میں بہتر صحت، رویے اور سماجی کارکردگی ہونے کے اشارے ہیں۔
جن بچوں نے ٹوکن عطیہ کر دیے ان میں سیشن کے آخر میں زیادہ مثبت اعصابی نظام دیکھا گیا۔
ملر بتاتے ہیں ’’ ہم اکثر سوچتے ہیں کہ بے لوث رویہ کے لئے ہمیں کچھ قیمت چکانا ہوتی ہے، لیکن نتائج اس کےبرعکس ہیں کہ جب بچے کم خوش قسمت بچوں کی مدد کرتے ہیں تو بدلے میں انہیں ہائر ویگل سر کے طور پر کچھ نہ کچھ واپس ملتا ہے. اس کا مطلب یہ ہے کہ ہم بہت چھوٹی عمر سے ہی دوسروں کی مدد یا بھلا کرنے پر خود سے بہتر محسوس کرتے ہیں۔‘‘

محققین نے یہ بھی نمونے کہ ٹوکن دینے کے ساتھ سماجی سطح ایس ای اسی ایس کا کیا تعلق تھا۔شرکاء کے خاندان درمیانی سے اعلی درمیان طبقے کے تھے۔

اعداد و شمار میں پتہ چلا کہ ان شرکاء نے کم ٹوکن عطیہ کیا جو زیادہ دولت مند خاندانوں سے تھے جبکہ انہوں نے مزید ٹوکن دیے جو دولت مند خاندانوں سے نہیں تھے۔

ملر کا کہنا ہے کہ ’’ یہ ہائی اےایس ثقافت کے کچھ پہلوؤں کا ہی اشارہ ہےجسے ہم بالغوں میں دیکھ چکے ہیں جیسے خود نمائی کا زیادہ ہونا اور معاشرے کے تعلق سے کم حساس ہونا، ہو سکتا ہے کہ 4 سال کی عمر میں بھی رویے کی یہ خصوصیات بچوں میں موجود ہو۔‘‘

اگرچہ تحقیق کا یہ نہیں کہتی کہ دولت سے خوشی نہیں ملتی، لیکن اس کی طرف اشارہ ضرور کرتی ہے کہ کچھ دینے سے 4 سال کا بچہ بھی بہتر محسوس کرتا ہے۔
اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر
کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

ملر نتیجہ بتاتے ہیں کہ ” ہمارے نتائج اشارے ہیں کہ بے لوث جذبے سے حوصلہ افزائی کے رویے کی وجہ سے تمام بچوں

کی صحت بہتر ہو سکتی ہے. ”

اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر
کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

Leave a comment

Your email address will not be published.