بھارت میں روزگار ترقی کے میدان


بھارت میں روزگار ترقی کے میدان

بھارت میں روزگار ترقی کےمیدان

جوطلبا ابھی اسکول میں پڑھ رہے ہیں یا کوئی نیا ہنر سیکھنے کی تیاری کر رہے ہیں، ان کے لیے یہ جاننا فائدہ مند ہے کہ حکومت ہند کی ایک رپورٹ میں کہا گیا ہے کہ اگلی دہا ئی میں 24 ہنر مندی کے میدان میں ترقی کا مقصد ہے۔ حکومت کا یہ بھی اندازہ ہے کہ 2022 میں 2013 کے مقابلے 11 کروڑ سے زیادہ قریب 58 کروڑ ہنر مندی کےجاب ہوں گے۔ اس کے ساتھ ہی، حکومت ہنر مندی کی جانچ کے لیے نئے معیار بنانے پر غور کر رہی ہے اور اس بدلے ہوئے فریم ورک کے مطابق ہی ٹریننگ پروگرام اور سرکاری تقرریوں کی فنڈنگ ​​سے منسلک قوانین میں بھی ترمیم کی جائے گی ۔

جن علاقوں میں زیادہ سے زیادہ ترقی کا امکان ہے، ان میںحیرت انگیز طور پر، ٹیکنالوجی، آئی ٹی، الیکٹرانکس اور ٹیلی کمیونیکیشن وغیرہ کے علاقے روزگارمیں دس مختلف میں نہیں ہوں گے۔ ہیلتھ کیئر کا شمار بھی اہم نہیں ہے۔ بھاری صنعت اورپیداوار بھی ٹاپ5 میں شامل نہ ہونے کا اندازہ ہے، جس میدان میں سب سے زیادہ روزگار کے ذرائع کے امکانات ہیں ، ان میں زراعت، کنسٹرکشن اور خوردہ بیوپار شامل ہیں۔ اندازہ ہے کہ 2022 میں زراعت کے میدان میں 21 کروڑ سے زیادہ روزگار کے مواقع فراہم کیے جا سکتے ہیں۔جاری شدہ چارٹ میں زراعت کے علاوہ دیگر تمام معاملات میں امکانات بہت کم نظر آتے ہیں کیونکہ یہ بہت بڑے میدان بن کر ابھررہےہیں۔

ہنرمندی کی ملازمتوں میں متوقع اضافہ

تفصیلات کے لیے چارٹ پر ماؤس ٹچ کریں۔ اس ڈیٹا کی طرف سے اشیاء

sortable کے کے لیے کلک یا ٹچ کریں اور واپس ڈیفالٹ آرڈر پر جانے کے لیے

دوبارہ کلک کریں۔

کارکردگی ترقی اور صنعتی وزارت کے سیکرٹری سنیل ارورہ کا کہنا ہے کہ حکومت ہنرمندوں کی ترقی کی سمت میں اپنی سوچ بدل رہی ہے اور اسی مانگ پر مبنی ہے ، اس میں اضافہ کر رہی ہے۔ روزگار کے بڑھتے ہوئے اعداد و شمار کے ساتھ ساتھ، اس رپورٹ میں ہر علاقے میں جاب رول اور اسکل گیپ پر بھی بحث جاری ہے۔ ایک مشیر فرم كےپی ایم جی کی طرف لکھی گئی اس رپورٹ میں 1000 صنعت کے ماہرین، 1500 طلبا، اسکل کونسلوں اور 100 سے زیادہ ٹریننگانسٹی ٹیوٹ کی رائے شامل ہے۔

اس رپورٹ کو جاری کرتے وقت، وزارت نے بار بار جس بات پر زور دیا ہے، وہ ہے نیشنل اسکلز كوالفکیشن فریم ورک (اے این ایس کیو ایف) کو لازم کرنا۔ اس مقابلہ کی بنیاد پر فریم ورک کے جو علم، ہنر اور ایپٹی ٹیوٹ کی مختلف سطحوں پر كوالیفکیشن یقینی بنائے گا۔ اس فریم ورک کا بڑا اثر ہونے کا اندازہ ہے کیونکہ دسمبر 2016 کے بعد سے حکومت اےاین ایس کیو ایف کے دائرے میں نہ آنے والے ہر طرح کے تعلیمی پروگرام کو فنڈ دینا بند کر دے گی۔ دسمبر 2018 کے بعد یہ لازمی ہو جائے گا کہ ہر تعلیمی پروگرام کے مطابق ہی کام ہواور تو اور مرکزی حکومت اور ایس کے پی ایس یو میں تقرریوں کے لیے قابلیت کا پیمانہ بھی اےاین ایس کیو ایف کے حساب سے بڑھے گا۔ ریاستی حکومتوں سے بھی اس فریم ورک کو اپنانے کے لیے کہا جائے گا۔

اس فریم ورک کا مقصد یہ ہوگا کہ حکومت کی طرف سے فنڈ پانے والے تمام تعلیمی اداروں میں كوالٹی کی سطح پر ایک مساوات ہو۔ داخلے بھی اسی بنیاد پر دیئے جانے کی بات کہی گئی ہے۔ چونکہ پرائیویٹ اداروں سے بھی اس فریم ورک کو اپنانے کے لیے کہا جائے گا تو روزگار میں متوقع ترقی کو حاصل کرنے میں یہ ایک قومی پالیسی کی شکل لے لے گا۔

اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر
https://facebook.com/FamiLifeUrdu کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

<img

Leave a comment

Your email address will not be published.