تعلیم میں دلچسپی موروثی ہوتی ہے


تعلیم میں دلچسپی موروثی ہوتی ہے

تعلیم میں دلچسپی موروثی ہوتی ہے

کئی تازہ سائنسی تحقیق میں پتہ چلا ہے کہ شخصیت کی تعمیر میں جینس کا کردار ہوتا ہے۔ ایک نئے مشاہدے کے مطابق یہ بھی تعجب کی بات نہیں ہے کہ تحقیق کے تعلق سے لگن بھی موروثی ہو سکتی ہے۔

اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ والدین بچے کو پڑھائی کے تعلق سے حوصلہ افزائی کرنے کی کوششیں چھوڑ دیں بلکہ یہ سمجھیں کہ ہر بچے کے لیے مختلف طریقے سے حوصلہ افزائی کرنے کی ضرورت ہے۔

اس تحقیق میں برطانیہ، کینیڈا، جاپان، جرمنی، رشیا اور امریکہ جیسے 6 ممالک کے 9 سے 16 سال کے قریب 13000 ناہموار اور یکساںجڑواں بچوں کا مشاہدہ کیا گیا۔ ان طالب علموں سے پوچھا گیا کہ وہ مختلف تعلیمی سرگرمیوں میں کس طرح لطف لیتے ہیں اور مختلف موضوعات میں سے ان کی قابلیت کس میں ہے۔ اس کے بعدفرٹرنل جڑواں بچوں کے جوابات کے مقابلے یکساںجڑواں بچوں کے جوابات سے کی گئی۔ فرٹرنل حمل میں جڑواں بچے جینس کے اثرات کو تقریبا ًنصف اشتراک پائے گئے جبکہ یکساں جڑواں میں یہ اثر تقریباً ایک جیسا ہی دیکھا گیا۔

جڑواں بچوں کے رد عمل میں مساوات دیکھنے والے کی شخصیت سے متعلق جائزوں میں دیکھا گیا ہے کہ فرٹرنل یا اسے حمل میں جڑواں بچے جنہیں ایک جیسی پرورش دی جاتی ہے، ان میں ایک جیسی تبدیلیاں پائی جاتی ہیں، اگر فرق ہوتا ہے تو وہ جینس کی وجہ سے ہے۔ اس سے اس بحث نے زور پکڑا جو فطرت بمقابلہ پرورش موضوع پر چلتی رہی ہے اور بہت سے مطالعے نے ثابت کیا ہے کہ اوسطاً فطرت کا ہی بڑا اثر لگتا ہے۔

اس مطالعہ میں ایسے جڑواں بچوں کے جوابات فرٹرنل جڑواں بچوں کے مقابلےزیادہ ملتی جلتی پائی گئیں۔ اس سےیہ نتیجہ اخذ کیا گیا کہ تعلیمی پرائے کے سلسلے میں جینس اور ذاتی تفریق کااثر زیادہ پڑتا ہے بجائے ماحول یا پرورش کے۔ محققین نے پایا کہ 40 سے 50 فیصد معاملات میں سیکھنے کے رجحان میں جو فرق دیکھیے وہ ان کے جینس کے اثرات کی وجہ سے تھا۔ یہ نتائج تمام ممالک میں تمام عمر کے بچوں میں یکساں نظر آئے۔ ساسڈیلي کی رپورٹ کے مطابق اس کا مشاہدہ پرسنلٹی اینڈ انڈویجل ڈیفرینسیز خط میں شائع ہوا ہے۔

اوهو يونورسٹی کے پروفیسر اور اس تحقیق کے شریک مصنف اسٹیفن پٹرل نے کہا کہ اس مشاہدے کے پہلے وہ مانتے تھے کہ ایسے بچوں میں خاندان یا اسکول کے ماحول کا اثر زیادہ سے زیادہ ہوتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ ’’مختلف ممالک میں مختلف تعلیمات میکانزم اور ثقافتی مختلف حالتوں کے درمیان بھی مشاہدے کے نتائج ایک جیسے ہی نظر آئے۔‘‘ یہ حیرت انگیز تھا۔ ہم نے پایا کہ لوگوں میں جو شخصیت کے فرق جینیاتی طور پر ہوتے ہیں، ان کا موٹویشن پر گہرا اثر پڑتا ہے اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ ہم طالب علموں کی حوصلہ افزائی کرنا چھوڑ دیں بلکہ یہ جاننے کی کوشش کریں وہ مختلف کیوں ہیں۔‘‘

سیکھنے کی لگن کے رجحان 40 سے 50 فیصد تو امید پر منحصر ہے ،لیکن اتنی ہی جس صورتحال پر منحصر ہے اس کا کہنا ہے کہ مختلف ماحول۔ اس کا مطلب ہے ہر شخص کو مختلف تجربہ ہیں یا اس مختلف سوچ ہوتی ہے۔اس کرہ وجوہات جیسے مختلف اساتذہ یا والدین کی طرف سے مختلف رویے وغیرہ سے تعمیر ہوتا ہے۔شخصیت کے اس پہلو کو پورا نہیں سمجھا جا سکا ہے، اور سمجھا جا سکتا ہے کہ والدین اور گھر کا ماحول بچوں کے خیالات سائز دے سکتا ہے۔

یہ پایا گیا ہے کہ جینیاتی اور مختلف وجوہات کے اثرات بچوں پر پڑتے ہے، لیکن بہت کم صرف 3 فیصد اثرات بچوں کی طرف سے مشترکہ ماحول پڑتا ہے۔

اس نتیجے کا مطلب یہ نہیں ہے کہ بچوں میں کوئی خاص جین ہے جو سیکھنے کے تعلق سے شوق پیدا کرتا ہے۔ بلکہ کچھ خاص جینس کا ایک پیچیدہ سیٹ ایسا کرتا ہے۔ اس کے ساتھ ہی ہر بچے کے ذاتی تجربہ بھی اثرانداز ہوتا ہے۔ پٹرل کہتے ہیں کہ ’’ہمیں کلاس میں طالب علموں کی بے شک حوصلہ افزائی کرنا چاہیےاور حوصلہ افزائی کرتے رہنا چاہئے۔‘‘ مجموعی طور پر ہر بچہ مختلف ہو جائے گا اور اس کی مختلف طرح سے حوصلہ افزائی کی ضرورت ہوگی۔‘‘

اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر
https://facebook.com/FamiLifeUrdu کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

Leave a comment

Your email address will not be published.