بچوں کو کتنا ہوم ورک کرنا چاہئے


Photo: Shutterstock

Photo: Shutterstock

بچوں کو کتنا ہوم ورک کرنا چاہئے

اسپین کی اوویڈو یونیورسٹی کے مطابق بچوں کے لیے ہوم ورک کے لیے مثالی وقت یا وقفہ 60 سے 70 منٹ کے لیے ہوتا ہے۔ ہسپانوی ٹیم نے پبلک، حکومت کی طرف سے امداد اور نجی اسکولوں کے 7725 طالب علموں سے پوچھا کہ وہ کتنا ہوم ورک کرتے ہیں، ان طلباء سے یہ بھی پوچھا گیا کہ وہ مختلف موضوعات پر کس طرح سے محنت کرتے ہیں اور کتنی بار دوسروں سے مدد لیتے ہیں۔ اس کے بعد انہیں ریاضی اور سائنس کے مثالی ٹیسٹ دیے گئے۔

امریکن ایسوسی ایشن تعلیمی نفسیات سے متعلق مضمون میں شائع اس تحقیق میں پایا گیا کہ زیادہ تر طالب علموں کے لیے ریاضی اور سائنس کے ہوم ورک کے لیے ایک گھنٹے کا وقت زیادہ سے زیادہ تھا اور جو طالب علم ان مضامین کے ہوم ورک کے لیے اتنا وقت دیتے تھے،انہوں نے بعد میں دیے گئے مثالی ٹیسٹ میں سب سے زیادہ اسکور حاصل کیا۔

کتابوں میں بے تحاشہ کھوئےرہنے والے طالب علموں کی کارکردگی پر منفی اثر دیکھنے میں آیا۔ 100 منٹ کے ہوم ورک کے بعد طلبا نے نسبتا کم اسکور کیا۔

واکس ڈاٹ کام، پر ایک مضمون میں حوالہ دیا گیا ہے کہ ‘’’ اس تحقیق کے شریک سربراہ ذیوير سواریذ-Alvarez کی کے مطابق، باقاعدہ ہوم ورک اور والدین کا کم سے کم مداخلت کرنا، ٹیسٹ میں سب سے زیادہ اسکور کی وجہ دیکھی گئی۔ سب سے زیادہ بااثر طالب علموں میں اپنے آپ سیکھنے کی عادات تھیں اور وہ آزادانہ طور پر کام کرنے کے عادی تھے۔

پھر بھی، اس تحقیق سے کچھ سوالات کے جواب نہیں مل سکے۔ مثال کے طور پر، طالب علموں کو ریاضی اور سائنس کے ٹیسٹ دیے گئے تھے ،لیکن نتائج مختلف نہیں دیے گئے،یہ بھی کہ بچوں کو ایک ہی بار ٹیسٹ دیا گیا تو ممکن ہے کہ ہوم ورک کی مقدار اور کارکردگی کے درمیان میں کوئی تعلق ہو۔ یہ مکمل طور پر درست استعمال نہیں کیا جا سکتا۔

واکس ڈاٹ کام کے مضامین کے مطابق، سوارےذ-Alvarez کی نے کہا کہ اس مطالعہ کے نتائج یہ سوال اٹھاتے ہیں کہ ‘’’ تعلیمی حکمت، خود کی کاشت اور اعتماد کا اثر بھی کارکردگی پر پڑتا ہے۔ نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ جب ہوم ورک کا سوال ہو تو ضروری ہے کہ کس طرح، نہ کہ کتنا۔ جب ایک بار ذاتی کوشش اور اپنی مرضی سے کام کا موضوع موجود ہوتا ہے تو وقت خرچ کرنے کی بات فضول ہے۔

اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر < ہمارے صفحہ > کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر
https://facebook.com/FamiLifeUrdu کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

Leave a comment

Your email address will not be published.