چیچک کے بارے میں وہ سب، جو آپ کو جاننا چاہیے


چیچک کے بارے میں وہ سب، جو آپ کو جاننا چاہیے

چیچک کے بارے میں وہ سب، جو آپ کو جاننا چاہیے

چکن پاکس یعنی چیچک معروف اور متعدی بیماری ہے جسے بہت سے لوگ جلد پر پڑنے والے ایک خاص قسم کے داغ یا ریشز کی وجہ پہچانتے ہیں۔ جو اس کے تعلق سےانجان ہیں، بتا دیں کہ یہ ریشز یا نشان چھوٹی چھوٹی لال پھنسيوں جیسے ہوتے ہیں جن میںکھجلی ہوتی ہے۔ یہ بیماری ایک وائرس کی وجہ سے ہوتی ہے ،جسے ویرسیلاذسٹر وائرس (وی جے ڈی وی ) کہتے ہیں۔ یہ تمام عمر کے لوگوں کو متاثر کر سکتا ہے اور بچوں، بالغوں اور جن افراد میں قوت مدافعت مضبوط نہ ہو، انہیں شدید متاثر کرتا ہے۔یہ ہوا کے ذریعہ پھیلتا ہے، متعدی مرض ہے جو کھانسنے اور چھینکنے سے پھیلتا ہے۔ یہ بیماری کسی اور کو اس حالت میں بھی ہو سکتا ہے جب کوئی کسی چیچک میں مبتلا مریض کے ارد گرد رہے۔

خصوصیات اور شناخت

متاثرہ شخص میں نظر آنے والی علامتوں کی بنیاد پر چیچک کی نشاندہی کی جاتی ہے۔ چیچک کی خصوصی علامات میں چہرے، سینے، کمر اور پھر پورے جسم پر پڑنے والے نشان ہیں۔یہ نشانات میں وقت کے ساتھ کھجلی اور پھنسيو ںمیں تبدیل ہو جاتےہیں ،جن میں سیال بھر جاتا ہے۔ یہ پھنسیاں یا چھالے قریب ایک ہفتے میں پرت میں تبدیل ہو جاتے ہیں ۔یہ بیماری پانچ سے دس دنوں میں ٹھیک ہوتی ہے، جس کی دیگر علامات درج ذیل ہیں:

تیز بخار

تھکن کا احساس

بھوک نہ لگنا

سر درد

جو لوگ چیچک کا ٹیکہ لگوا چکے ہیں، وہ بھی وائرس کی زد میں آ سکتے ہیں اور اس مرض میں مبتلا ہو سکتے ہیں،لیکن ان لوگوں میں اس بیماری کی ہلکی علامات ہی نظر آتی ہیں۔

علاج

چیچک کا کوئی علاج نہیں ہے، لیکن پریشان کرنے والی علامات سے چھٹکارا حاصل کرنے اور کھجلی جلد کو ٹھیک کرنے کے لیے کچھ طریقے ضرور ہیں۔بہت سے لوگ جو کا آٹا استعمال کرنے کا مشورہ دیتے ہیں، یا تو پیسٹ لگا کر یا ممکن ہو تو اس میں نہا کر. نیم کے درخت کی ڈال سے مریض کو ہلکے سے ہوا کرنا بھی ایک طریقہ ہے. اس ڈال کی پتی ہلکے سے مریض کے جسم کو چھوانے سے کھجلی میں راحت ملتی ہے۔جلد نہ رگڑكر اور اپنے ناخن چھوٹے رکھ بھی آپ جلد کے انفیکشن سے بچ سکتے ہیں۔

بخار کا علاج کیا جا سکتا ہے ،لیکن اسپرین کا استعمال نہیں کرنا چاہئے، خاص طور پر بچوں کے معاملے میں کیونکہ یہ سنگین تکلیف دہ حالت بنا سکتی ہے۔چیچک کی وجہ سے آنے والے بخار کے صحیح علاج کے لیےاپنے ڈاکٹر کی صلاح لیں۔اس بیماری سے دوچار ان لوگوں کو کبھی کبھی اینٹی وائرل علاج بھی کیے جاتے ہیں جن میں، کسی اور سنگین بیماری کے ہونے کا خدشہ ہو۔اس بارے میں معلومات کے لیے اپنے ڈاکٹر سے مشورہ کرلیں۔ اس زمرے میں وہ لوگ ہیں جنہیں پہلے پہلے چیچک نہیں ہوا، جن کی قوت مدافعت کمزور ہے، جن کی عمر 12 سال سے زیادہ ہے یا جو حاملہ خواتین ہوں۔کچھ اور علامات کے نظر آنے پر آپ کو فوری طور مزید طبی مشورہ طرح اگر بخار چار دن یا 102 ڈگری فارن ہائٹ سے زائد ہو، پس وجہ نظر آنے بیکٹیریل انفیکشن، مسلسل قے، سانس لینے میں تکلیف اور دیگر کسی بیماری کے سنگین اشارے۔

دفاع

چیچک سے بچاؤ کا سب سے موثر طریقہ تو ویکسین لگوانا ہی ہے۔ دی انڈین اکیڈمیڈمي آف پیڈياٹرشينس کا مشورہ ہے کہ اس کے دو ڈوز دلوانے چاہئے، پہلے 15 سے 18 ماہ کی عمر کے درمیان اور دوسرا 4 سے 6 سال کی عمر کے درمیان۔ تاہم، کیچ اپ ویکسین کسی بھی وقت لگوائےجا سکتے ہیں ویریی سیلا سے زیادہ بیماری سے بچاؤ ممکن ہے۔ویکسین لیےہوئے شخص کو اگر یہ بیماری ہوتی ہے تو عام ہلکی علامات نظر آتی ہیں۔ ویکسین سے چیچک کی وجہ سے ہونے والے دوسرے امراض سے بھی بچاؤ ممکن ہے جیسے اس داد سے بچاؤ ہوتا ہے جس سے جلد کی دردناک صورت حال ہو سکتی ہے۔ اگر آپ نے اس کا ٹیکہ نہیں لگوایا اور آپ اس بیماری سے دوچار ہوتے ہیں تو ڈاکٹر سے مشورہ کریں اور مناسب علاج کروائیں۔

اگر آپ اس مضمون میں دی گئی معلومات کو پسند کرتے ہیں تو برائے مہربانی فیس بک پر
https://facebook.com/FamiLifeUrdu کو لائک اور شیئر کریں کیونکہ اس اوروں کو بھی مطلع کرنے میں مدد ملے گی۔

Leave a comment

Your email address will not be published.